خزاں

تحریر: یمین زبیری

خزاں

خزاں اپنے جوبن پہ آنے لگی ہے        یہ رنگ اپنے دیکھو دکھانے لگی ہے
ہے سردی کے آنے کا پیغام گویا         جو رنگوں  کو دیکھو   تو انعام گویا
کئی رنگ پیڑوں پہ لو آ گئے ہیں         کئی رنگ پیڑوں پہ لو چھا گئے ہیں
جو پتے کہ پیڑوں پہ اب تک لدے ہیں         نمایاں  وہ  ہر  پیڑ  کو  کر  رہے ہیں
ہرے لال پیلے ہیں  پتے  سجے  واں         بہت پیڑ  ایسے  ہیں کتھئی بھرے  واں
درختوں  پہ  جو  سرخ  پتے  لدے  ہیں         یہ  لگتا  ہے جوں سرخ  شعلے  اٹھے ہیں
خزاں ہی کا حصہ تو پت جھڑ بھی ہے گی         یہ منظر ہمیں ایک دیتی بھی ہے گی
ہے پت جھڑ کا دیکھو سماں  دیکھنے کا         مزا   آگیا   پھلجھڑی  چھوٹنے  کا
ادھر فرش   پتوں کا ہرسو بچھا ہے         یا  قالین  پتوں  کا  ہرسو  پڑا ہے
سڑک   پر  ہوا  تیز  چلنے  لگے  گی         کہ پتوں کی اک دوڑ  ہونے لگے گی
یہ  پتے  زمانے  میں  سارے  پھریں گے         ہوا ہو  جدھر  کی  ادھر کو چلیں گے
ہوا  کی مگر ان  میں  پہچان  ہے گی         یہ دوڑیں گے  ایسے کہ جوں جان ہے گی
یمین آج  ہے  حکم  سب کو بتا دے         کہ قانون فطرت کے ہیں سب ہی تابع
یہ دنیا میں بستے جو انسان ہیں گے         حوادث سے سب ہی پریشان ہیں گے
حوادث کا طوفان سا اک مچا ہے        گھرا  بس  حوادث میں انساں کھڑا ہے
حوادث ہیں کیا  تم اگر یہ سمجھ لو         تو تم ان سے اچھی طرح سے نبٹ لو
پرند اپنے پر جو ہلاتا نہیں ہے         خدا بھی اسے پھر اڑاتا نہیں ہے

Yemeen Zuberi

Yemeen ul Islam Zuberi is an ex-journalist from Pakistan. He writes in Urdu and rarely in English. Besides essays, he also writes poetry. In Pakistan, he worked for different newspapers for 20 years. Now lives in the US.

yemeen has 7 posts and counting.See all posts by yemeen

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *